خبریں

داخلوں میں بے ضابطگیاں: 57 میڈیکل کالجز کے خلاف کاروائی

ندیم تنولی

اسلام آباد: پاکستان بھر میں میڈیکل کالجز کی جانب سے داخلوں میں میریٹ کی پامالی اور بے ضابطگیوں کی شکایات پاکستان میڈیکل کمیشن نے تحقیقات مکمل کرنے کے بعد 57 میڈیکل کالجز کے خلاف کاروائی کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق داخلوں میں بے ضابطگیوں پر 22 کالجز کے داخلے معطل اور 36 کالجز کے داخلے منسوخ کرنے کے احکامات جاری کئے گئے ہیں جبکہ دو کالجز کو طلباء سے وصول کی گئی اضافی فیس واپس کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

دی رپورٹرز کو موصول ہونے والے دستاویزات کے مطابق 22 کالجوں بشمول سہارا میڈیکل کالج، راول انسٹیٹیویٹ آف ہیلتھ سائنسز ، محمد میڈیکل کالج و دیگر نے انٹرویو کےمارکس یا فہرستیں نہیں دکھائیں۔ ان کالجوں نے میرٹ لسٹوں کی نمائش اور مضبوط مالی پس منظر والے طالب علموں کو ترجیح دینے کے لیئے پہلے فیس جمع کروانے کا مطالبہ کیا تھا۔ داخلے کے عمل کے دوران کم میرٹ طلبہ جنہوں نے فیس جمع کروائی تھی انہیں انٹرویو کے لئے زیادہ نمبر دیئے گئے ۔ آخر میں ، ان کالجوں نے ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس پروگرام کے لئے ایک ہی انٹرویو لیا۔

دو کالجوں نے اپنے داخلے کے عمل کو اپنایا۔ انہوں نے پی ایم سی کی قومی میرٹ لسٹ جاری ہونے سے پہلے ہی داخلے شروع کردیئے تھے۔
فرنٹیئر میڈیکل کالج نے بی ڈی ایس پروگرام میں ایک طالب علم کو داخلہ دیا جبکہ حقیقت میں ، طالب علم نے بی ڈی ایس پروگرام کے لئے درخواست ہی نہیں دی تھی۔

محمد میڈیکل کالج نے پورے پانچ سالہ پروگرام کے لئے یکساں فیس لی یا انہوں نے ایک سال کی فیس ایڈوانس کے علاوہ چار سال کے لئے بینک گارنٹی لی تھی۔

پی ایم سی حکام کے مطابق ان خلاف ورزیوں کو دور کرنے کے لئے ، پی ایم سی ان کالجوں میں دوبارہ داخلے کی تشہیر کرے گا ، جہاں پی ایم سی کی میرٹ کی پیروی کی جائے گی۔ اس دوبارہ داخلے کے عمل کے اشتہار کی لاگت کالج برداشت کرے گی۔ کالج کی داخلہ فہرست میں سب سے کم میرٹ پی ایم سی داخلے کے معیار کے مطابق کل نمبروں کا 80٪ ہوگا۔ جن طلبا نے کالج میں داخلہ نہیں لیا ان کو اشتہار شائع ہونے کے بعد 5 دن کے اندر درخواست دینے کے بارے میں مطلع کیا جائے گا۔

پی ایم سی کے مطابق پرائیویٹ میڈیکل کالجز کے خلاف کاروائی کا فیصلہ داخلہ انٹرویو کے مرحلے میں کامیاب ہونے والے ہرطالب علم کے اعداد و شمار کو جامع جائزہ لینے کے بعد کیے گئے تاکہ یہ یقینی بنایا جاسکے کہ وہ میرٹ پر انتخاب کے معیار پر پورا اترے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button